Shehr O Funn

Firoz Mahmud

Soaked Dream, 2009
Photograph in light box, metal eye-glass sculpture, paint

Firoz Mahmud lives and works in Dhaka and New York.
Mahmud’s artistic practice is realized through various mediums such as painting, installation and photography that engage with his cultural and political heritage. For LB01, in the Soaked Dream project, the artist exhibited especially designed “seeing devices.” The work urged audiences to think about issues of labour and visibility today in the global South.
Mahmud was a participant at Rijksakademie VB Kunsten, Amsterdam, and has a PhD from the Tokyo University of Arts, an MFA from Tama Art University and a BFA from Dhaka University. He has exhibited at Office of Contemporary Art, Norway, MAXXI Museum of 21st Century Arts Rome, Asia House London, Hiroshima Museum of Contemporary Art, University Art Museum, Metropolitan Art Museum, Museum of Contemporary Art Tokyo & Geidai PS1, Fuchu Art Museum, Mori Art Museum (CG) Tokyo; Metropolitan Mostings Hus Copenhagen, Sovereign Art Foundation HK, Ota Fine Arts, Exhibit320, Delhi, Dhaka Art Center, National Museum, Bengal Gallery Dhaka. Mahmud’s work has been exhibited at the following biennales: Dhaka Art Summit, Setouchi Triennale (BDP), Aichi Triennial, Sharjah Biennale, Cairo Biennale, Echigo-Tsumari Triennial, Asian Biennale.

فیروز محمود

آرٹ پراجیکٹ بہ عنوان ’’سوکڈ ڈریمز‘‘ بذریعہ ذاتی مواجہہ جہاں حقیقت اورِ سخن کا ملاپ ممکن نظر آتا ہے۔ رفاہ عامہ کی امید دلا رہا ہے ۔ یہ اجتماعی عظم اور غوروفکر کی حیات نو کی طرف اہم قدم ہے ’’زمردیں چشمہ‘‘ ہر فرد کے تصورات کو بننے میں مدد دے گا، میں نے اپنے فن کے ذریعے خاندانوں ، بچوں، امتیازی اقلیتوں اور مہاجرین کی ابھرتی ہوئی خواہشات کی اختراع میں مدد دی ہے۔ یہ تصویری منصوبہ نسلی مہاجرین کے حالیہ عالمی مظاھرے کی یاد دلاتا ہے۔

چشمہ علامتی فن پارہ بنایا گیا ہے ایکّاَ گھریلو اور خاندانی نظریے سے، توضیح لوگ زمردیں چشمے کو پہن کر خشگوار زندگی کے متلاشی ہیں اور اپنے بہترین نو تعمیر کے لیےِ مستقبل کی ازسرزپرعزم ہیں۔

یہ چشمے ان اشیائے ترکیب سے وجود میں آئے ہیں جو مختلف گھرانوں کے سہانے خوابوں اور مستقبل سے جڑی ہیں فیکٹریوں سے جمع شدہ آلات کی مدد سے یہ فن پارے تخلیق پائے ہیں ۔ جب ان میں سے کوئی یہ چشمہ پہنتا ہے تو میں ایک لمحے کے لیے آسما ں نظر بنِ کی طرف دیکھتے ہوئے ان کا اہلجاتا ہوں۔




Text & image source: Lahore Biennale Foundation