Amina Zoubir

LAST POP DANCE BEFORE DARKNESS, 2014 – 2016
Video Installation, HD PAL 16:9, colour, sound, duration: 30 minutes
MUSCICAPIDAE, 2016
Iconographic installation, 15 photomontages, 80 x 66 cm each, silver print on paper RC Mat Fuji Crystal Archive Velvet

The iconographic installation MUSCICAPIDAE gathers fragments of vinyl records collected by the artist’s family who gathered them with some identity photos of Algerians, friends and family members. Amina Zoubir wanted to catalog, testify, reveal and repair the image of the most famous singing nightingales of Algeria, Morocco, Tunisia and Egypt, ignored or unknown for the most part by the younger generations; some have disappeared during the civil war of the 1990s in Algeria include Rachid Baba Ahmed, Cheb Aziz, Lounès Matoub and Cheb Hasni. The installation creates poetic links between individual and collective narratives, questions the musical imaginary in accumulated images and exposes the creative abundance of the 60s to the 80s in North Africa, displaying the will of the singers to radiate after independence to produce an economy of happiness. It’s time for nostalgia and miracles, it’s time for the development of African singers and those who listen to them, whose resilience will persist thanks to our duty of memory

پیکرنگارانہ تنصیب موسیقاپیدی میں ان وینائل ریکارڈوں کو اکٹھا کیا گیا ہے جو فنکار کے خاندان نے الجزائریوں، دوستوں اور گھر والوں کی شناختی تصویروں کے ساتھ جمع کیے تھے۔ امینہ زبیری نے الجیریا، مراکش، تیونس اور مصر کی مشہور نغمہ سرا بلبلوں کی تصویروں کی فہرست بندی، جانچ،اجاگر اور بحال کرنا چاہی جو بعد کی نسلوں کے بیشتر حصے کے لیے انجانے یا نظر انداز شدہ تھے؛ کچھ 1980 کی الجیریائی خانہ جنگی میں لاپتہ ہو گئے تھے جن میں رشید بابا احمد، شاب عزیز، لوناس مطوب اور شاب حسنی شامل ہیں۔ یہ تنصیب انفرادی اور اجتماعی بیانیوں، سوالوں اور یکجا کردہ تصاویر میں غنائی عکاسی کے درمیان شاعرانہ روابط ڈھونڈتی ہے اور 60 اور 80 کی دہائی میں شمالی افریقہ میں تخلیقی وفور کو اجاگر کرتی ہے، اور اس سے گائیکوں کی انبساط کی دولت پیدا کرنے کی آزادی کو منعکس کرنے کی امنگ کو سامنے لاتی ہے، یہ افریقی گائیکوں اور ان کے سننے والوں کے ُابھرنے کا وقت ہے، جن کا استقلال ہمارے ذہنوں پرہمیشہ نقش رہے گا۔

 




Courtesy the artist and Primo Marella Gallery