Ayman Zedani & Ahmad Makia

Between the Heavens and the Earth series, 2019 – 2020
Biofilms, variable dimensions, new commission
The Firmaments, Ca. 603, Ma’in
The Irascible Animal Soul, Ca. 617, Tayma
The Beardless Youth, Ca. 603, Yathrib (present-day Medina)
The Scribe, Ca. 619, Mecca
The Miser, Ca. 601, Taif

Between the Heavens and the Earth: The Golden Age of Polytheistic Material Culture in Pre-Islamic is a product of the cultural reforms that are currently underway in Saudi Arabia and aligned Gulf countries. In recent years, these regions have been celebrating the pre-Islamic, polytheistic Arabian material culture via curated exhibitions at renowned institutions, such as the Louvre Abu Dhabi, as well as more intimate venues, such as the Al-Ula heritage site in Saudi Arabia (both inaugurated in 2017). This is truly remarkable, as the local public has not had the opportunity to view objects related to its pre-Islamic heritage for centuries, as doing so was long considered sacrilegious. Between the Heavens and the Earth aims to extend this ideological shift by staging a one-of-a-kind display of pre-Islamic masks. Produced during the muted golden age of polytheistic material culture in pre-Islamic Arabia, the masks exemplify the rivalling styles of artistic production during the early seventh century: pagan human figuration and Islamic aniconism. The installation highlights the contemporary search for a new, Gulf-based, namely Saudi Arabian selfhood through the appropriation and reimagination of pre- Islamic material culture

آسمانوں اور زمین کے بیچ فن اور ثقافت کی اصلاحات کی پیداوار ہے جو آج کل سعوردی عرب اور ملحقہ خلیج ممالک میں جاری ہیں جہاں جزیرہ نما عرب کے قبل از اسلام مشرکانہ مادی ثقافت کا جشن منایا جا رہا ہے۔ اس ثقافتی تبدیلی کی مثالوں میں لوورے ابو ظہبی میں نمائشیں اورسعودی عرب میں ال- اولا کا ثقافتی مقام شامل ہیں، دونوں کا افتتاح 2017 میں ہوا تھا۔

یہ بڑی غیرمعمولی پیش رفت ہے کیونکہ جزیرہ نما عرب میں قبل از اسلام ورثے کو اس کی ملحدانہ خاصیتوں کی وجہ سے کئی صدیوں تک عوام کی نظروں سے دور رکھا گیا ہے۔ لاہور بینالے 2020 کے لیے، آسمانوں اور زمین کے بیچ نے اس نظریاتی تبدیلی سے توسیع لی ہے اور قبل از اسلام نقابوں کے منفرد اظہار کا مظاہرہ کیا ہے۔ قبل از اسلام عرب میں مشرکانہ مادی ثقافت کے خاموش سنہری دور میں جنم لینے والے نقاب ملحد انسانی تصویر اور ساتویں صدی کے ابتدائی دور کے اسلامی اینیکونزم کے حریف فنکارانہ پیشکش کا اظہار ہے۔ یہ فن پارہ اس حقیقت کو آشکار کرتا ہے کہ آج کل جزیرہ نما عرب میں قبل از اسلام مادی ثقافت کے ادراک اور تصور سے ایک نئی خلیجی، یوں کہہ سکتے ہیں کہ سعودی عریبین ذاتی شناخت کے لیے نظریاتی تلاش کا کام جاری ہے۔

 




Text provided by artist
Co-Commissioned by Qarshi Industries, Athr Gallery (Jeddah), and Lahore Biennale Foundation